آسیہ مسیح کا نام ای سی ایل میں ڈالنے کا معاملہ ، حافظ احتشام احمد کی درخواست مسترد

اسلام آباد (اے ٹی ایم نیوز آن لائن) ملعونہ آسیہ مسیح کا نام ای سی ایل میں ڈالنے کے متعلق انٹرا کورٹ اپیل کی اسلام آباد ہائیکورٹ میں سماعت ہوئی . اسلام آباد ہائیکورٹ کے جج جسٹس اطہر من اللہ اور جسٹس میاں گل حسن اورنگزیب پر مشتمل ڈویژن بینچ نے حافظ احتشام احمد کی جانب سے دائر انٹرا کورٹ اپیل کی سماعت کی . حافظ احتشام احمد کی جانب سے ملک مظہر جاوید ایڈووکیٹ عدالت میں پیش ہوئے۔ ملک مظہر جاوید ایڈووکیٹ نے عدالت کو بتایا کہ ملعونہ آسیہ مسیح نے شان رسالت صلی اللہ علیہ وسلم میں بدترین گستاخی کا ارتکاب کیا ہے ،ٹرائل کورٹ ملعونہ آسیہ مسیح کو جرم ثابت ہونے پر سزائے موت سنا چکی ہے، ہائیکورٹ نے بھی ٹرائل کورٹ کا فیصلہ برقرار رکھا،ملعونہ کی سزائے موت کے خلاف اپیل پر سپریم کورٹ فیصلہ محفوظ کر چکی ہے،خدشہ ہے کہ اگر سپریم کورٹ نے ملعونہ آسیہ مسیح کی اپیل منظور کر لی تو وہ نظر ثانی کی اپیل دائر ہونے سے قبل ہی ملک سے فرار ہو جائے گی . اس لئے ہماری استدعا ہے کہ ملعونہ آسیہ مسیح کا نام ای سی ایل میں ڈالنے کا حکم دیا جائے .
وکیل کے دلائل سننے کے بعد جسٹس اطہر من اللہ نے استفسار کیا کہ کیا سپریم کورٹ نے آسیہ مسیح کا نام ای سی ایل میں ڈالنے کا حکم دیا ہے ؟ جس پر ملک مظہر جاوید ایڈووکیٹ نے بتایا کہ نہیں،سپریم کورٹ نے ایسا کوئی حکم نہیں دیا. جسٹس اطہر من اللہ نے کہا کہ جب سپریم کورٹ نے ایسا کوئی حکم نہیں دیا تو ہم کیسے دے سکتے ہیں ؟ آسیہ مسیح کی اپیل سپریم کورٹ میں زیر التوا ہے،ہم کوئی حکم دیں گے تو یہ سپریم کورٹ کی کاروائی میں مداخلت ہو گی . درخواست گزار وکیل نے کہا کہ سپریم کورٹ میں آسیہ مسیح کی اپیل زیر التوا ہے،ای سی ایل میں نام ڈالنے کے معاملے کا اس سے کوئی تعلق نہیں جس پر جسٹس اطہر من اللہ نے کہا کہ اس معاملے کا آسیہ مسیح کی سپرم کورٹ میں زیر التوا اپیل سے تعلق ہے ، ہم ایسا کوئی کوئی حکم جاری نہیں کریں گے،آپ ریلیف لینے کے لئے سپریم کورٹ چلے جائیں. عدالت عالیہ نے ملعونہ آسیہ مسیح کا نام ای سی ایل میں ڈالنے کے متعلق انٹرا کورٹ اپیل بھی مسترد کر دی اور تفصیلی فیصلہ محفوظ کرلیا جو بعد میں سنایا جائے گا .
یاد رہے کہ انٹرا کورٹ اپیل میں جسٹس محسن اختر کیانی کے فیصلے کو کالعدم قرار دیتے ہوئے وفاقی حکومت کو ملعونہ آسیہ مسیح کا نام ای سی ایل میں ڈالنے کا حکم دینے کی استدعا کی گئی تھی۔ انٹرا کورٹ اپیل میں وفاقی سیکریٹری داخلہ،ڈی جی ایف آئی اے اور چیف سیکریٹری پنجاب کو فریق بنایا گیا تھا۔
واضح رہے کہ اسلام آباد ہائیکورٹ کے جسٹس محسن اختر کیانی نے ملعونہ آسیہ مسیح کا نام ای سی ایل میں ڈالنے کے متعلق حافظ احتشام احمد کی جانب سے دائر پٹیشن بارہ اکتوبر کو خارج کر دی تھی۔ دوسری جانب پٹیشنر حافظ احتشام احمد کا ہائیکورٹ کے فیصلے کے خلاف سپریم کورٹ سے رجوع کرنے کا اعلان کردیا ہے . حافظ احتشام احمد کا کہنا تھا کہ ڈویژن بینچ کا تحریری فیصلہ ملتے ہی سپریم کورٹ سے رجوع کریں گے .