کوئی شرم ہوتی ہے، کوئی حیا ہوتی ہے، رزتاج گل نجی ٹی وی کی خبر پر برس پڑیں

فائل فوٹو

لاہور (اے ٹی ایم نیوز آن لائن) گذشتہ کچھ روز سے سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی تصاویر جن میں وزیر مملکت برائے موسمیاتی تبدیلی زرتاج گل بارڈر ملٹری فورس کے دفتر میں انچارج کی کرسی پر بیٹھی پائی گئیں اور اس کے ساتھ ساتھ یہ خبر بھی کہ وہ یہاں‌ غیرقانونی گاڑیاں چھڑوانے کیلئے آئی تھیں، کی وزیر مملکت نے اپنے ویڈیو پیغام میں تردید کردی.

اپنے ویڈیو پیغام میں انہوں نے نجی ٹی وی کی رپورٹنگ پر خوب تنقید کی. انکا کہنا تھا کہ وہ تصاویر انکے ہی سوشل میڈیا اکاؤنٹ سے اٹھا کر انکے ہی خلاف پروپیگینڈا کیا گیا ہے. ایسا کرنے والوں کو شرم آنی چاہیئے، کیا یہ شفافیت ہے رپورٹنگ کی؟، زرتاج گل کا کہنا تھا کہ انہیں چیک پوسٹ کے اہلکاروں نے بلایا تھا اور اپنے مسائل کے حل کیلئے کہا تھا، اگر کچھ غلط کیا ہوتا تو اپنے سوشل میڈیا اکاؤنٹ پر تصاویر اپ لوڈ نہیں کرتی.

یاد رہے، وزیر مملکت برائے موسمیاتی تبدیلی زرتاج گل کی بارڈر ملٹری فورس کے دفتر میں انچارج کی کرسی پر بیٹھنے کی تصویر وائرل ہوگئی تھیں۔

وزیر مملکت برائے موسمیاتی تبدیلی زرتاج گل چند دن پہلے قبائلی علاقے رونگھن کے دورے پر گئیں ، جہاں انہیں نے بارڈر ملٹری پولیس کی چیک پوسٹ کا بھی دورہ کیا۔

اس موقع پر وہ انچارج کی کرسی پر بیٹھ گئیں، تصاویر وائرل ہونے پر پولیٹیکل ایجنٹ ٹرائبل ایریا اعجاز خالقی کا کہنا تھا کہ اہلکار نے قبائلی روایت کے تحت خاتون کو کرسی دی تھی اور مقامی قبائلیوں سے ملاقات کی تھی۔